Allama Iqbal's Poetry
  bullet سرورق   bullet شخصیت bulletتصانیفِ اقبال bulletگیلری bulletکتب خانہ bulletہمارے بارے میں bulletرابطہ  

ضربِ کلیم

مندرجات

یعنی اعلانِ جنگ، دورِ حاضر کے...
نہیں مقام کی خُوگر طبیعتِ آزاد
اعلیٰحضرت نوّاب سرحمید اللہ خاں...
ناظرین سے
تمہید
اِسلام اور مسلمان
صُبح
لا الٰہ الاّ اللہ
تن بہ تقدیر
مِعراج
ایک فلسفہ زدہ سیّد زادے کے نام
زمین و آسماں
مسلمان کا زوال
عِلم و عِشق
اِجتہاد
شُکر و شکایت
ذِکر وفِکر
مُلّائے حَرم
تقدیر
توحید
علم اور دین
ہِندی مسلمان
آزادیِ شمشیر کے اعلان پر
جِہاد
قُوّت اور دین
فَقر و مُلوکیّت
اِسلام
حیاتِ اَبدی
سُلطانی
صُوفی سے
اَفرنگ زدہ
تصوّف
ہِندی اِسلام
غزل
دُنیا
نماز
وَحی
شکست
عقل و دِل
مستیِ کردار
قَبر
قلندر کی پہچان
فلسفہ
مردانِ خُدا
کافر و مومن
مہدیِ برحق
مومن
محمد علی باب
تقدیر
اے رُوحِ محمدؐ
مَدنِیَّتِ اسلام
اِمامت
فَقر و راہبی
غزل
تسلیم و رِضا
نکتۂ توحید
اِلہام اور آزادی
جان و تن
لاہور و کراچی
نُبوّت
آدم
مکّہ اور جنیوا
اے پِیرِ حرم
مہدی
مردِ مسلمان
پنجابی مسلمان
آزادی
اِشاعتِ اسلام فرنگستان میں
لا و اِلّا
امُرَائے عرب سے
احکامِ الٰہی
موت
قُم بِاذنِ اللہ
تعلیم و تربیت
مقصود
زمانۂ حاضر کا انسان
اقوامِ مشرق
آگاہی
مُصلحینِ مشرق
مغربی تہذیب
اَسرارِ پیدا
سُلطان ٹِیپُو کی وصیّت
غزل
بیداری
خودی کی تربیت
آزادیِ فکر
خودی کی زندگی
حکومت
ہندی مکتب
تربیت
خُوب و زِشت
مرگِ خودی
مہمانِ عزیز
عصرِ حاضر
طالبِ علم
امتحان
مدرَسہ
حکیم نطشہ
اساتِذہ
غزل
دِین و تعلیم
جاوید سے
عورت
مردِ فرنگ
ایک سوال
پردہ
خَلوت
عورت
آزادیِ نسواں
عورت کی حفاظت
عورت اور تعلیم
عورت
ادبیات (فنُونِ لطیِفہ)
دِین وہُنر
تخلیق
جُنوں
اپنے شعر سے
پیرس کی مسجد
ادبیات
نگاہ
مسجدِ قُوّت الاسلام
تِیاتَر
شُعاعِ اُمِّید
اُمِّید
نگاہِ شوق
اہلِ ہُنر سے
غزل
وُجود
سرود
نسیم و شبنم
اَہرامِ مصر
مخلوقاتِ ہُنر
اقبالؔ
فنونِ لطیفہ
صُبحِ چمن
خاقانیؔ
رومی
جِدّت
مِرزا بیدلؔ
جلال و جمال
مُصّور
سرودِ حلال
سرودِ حرام
فوّارہ
شاعر
شعرِ عجَم
ہُنَرورانِ ہند
مردِ بزرگ
عالَمِ نو
ایجادِ معانی
موسِیقی
ذوقِ نظر
شعر
رقص و موسیقی
ضبط
رقص
سیاسیاتِ مشرق و مغرب
اِشتراکِیت
کارل مارکس کی آواز
اِنقلاب
خوشامد
مناصب
یورپ اور یہود
نفسیاتِ غلامی
بلشویک رُوس
آج اور کل
مشرق
سیاستِ افرنگ
خواجگی
غلاموں کے لیے
اہلِ مِصر سے
ابی سِینیا
اِبلیس کا فرمان اپنے سیاسی...
جمعیتِ اقوام مشرق
سُلطانیِ جاوید
جمہُوریت
یورپ اور سُوریا
مسولینی
گِلہ
اِنتداب
لادِین سیاست
دامِ تہذیب
نصیحت
ایک بحری قزاّق اور سکندر
جمعِیّتِ اقوام
شام و فلسطین
سیاسی پیشوا
نفسیاتِ غلامی
غلاموں کی نماز
فلسطِینی عر ب سے
مشرق و مغرب
نفسیاتِ حاکمی
محراب گُل افغان کے افکار
میرے کُہستاں! تجھے چھوڑ کے جاؤں...
حقیقتِ ازَلی ہے رقابتِ اقوام
تِری دُعا سے قضا تو بدل نہیں سکتی
کیا چرخِ کج رو، کیا مہر، کیا ماہ
یہ مَدرسہ یہ کھیل یہ غوغائے...
جو عالمِ ایجاد میں ہے صاحبِ ایجاد
رومی بدلے، شامی بدلے، بدلا...
زاغ کہتا ہے نہایت بدنُما ہیں...
عشق طینت میں فرومایہ نہیں مثلِ...
وہی جواں ہے قبیلے کی آنکھ کا تارا
جس کے پرتوَ سے منوّر رہی تیری...
لا دینی و لاطینی، کس پیچ میں...
مجھ کو تو یہ دُنیا نظر آتی ہے...
بے جُرأتِ رِندانہ ہر عشق ہے...
آدم کا ضمیر اس کی حقیقت پہ ہے شاہد
قوموں کے لیے موت ہے مرکز سے...
آگ اس کی پھُونک دیتی ہے برنا و...
یہ نکتہ خوب کہا شیر شاہ سُوری نے
نگاہ وہ نہیں جو سُرخ و زرد پہچانے
فطرت کے مقاصد کی کرتا ہے نِگہبانی

Ray of Hope


The sun conveyed this message to its rays
"What wonder great, the change of nights and days!
You have been rambling since aeons in space,
But hate among men is increasing pace.
To shine on sand affords no pleasure sound,
Nor peace, like breeze in making flower's round.
Be lost in fount of light that gave you birth,
Forsake the park, the waste, the roof and earth".

The rays rise from every nook of space,
Make haste to take the sun in fond embrace.
Loud roar persists, there can't be light in West,
For smoke makes West enrobed in able vest.
Though East is not bereft of inner light,
Yet quiet of tomb prevails like Celestial Height.
O sun that light the world keep us in mind,
Hide us in breast so bright and kind.

A shameless ray as proud as houri's glance
Bereft of rest, like mercury e'er at dance,
Implored the sun to let it spread its light
Till every mote of East grows lustrous bright.
The dark surroundings of Hind it won't forsal
Till natives sunk in slumber do not wake.
The hopes of Orient on this region hinge,
The tears that Iqbal sheds on it impinge.
The moon and Pleiades get light from this land,
Its stones are costlier than gems of purest brand.
It has produced men who hid sense can see,
With utmost ease can cross the swollen sea.
The harp whose music warmth to gathering lent
The plectrum alien is with force quite spent.
The Brahman guards the fane and sleeps at gate,
The Muslim in mosque's niche bewails his fate.
Don't shun the East, nor look on West with scorn,
Since Nature yearns for change of night to morn.

Translated by: Syed Akbar Ali Shah
شُعاعِ اُمِّید

بھی موجود ہے


logo Iqbal Academy
اقبال اکادمی پاکستان
حکومتِ پاکستان
اقبال اکادمی پاکستان