Allama Iqbal's Poetry
  bullet سرورق   bullet شخصیت bulletتصانیفِ اقبال bulletگیلری bulletکتب خانہ bulletہمارے بارے میں bulletرابطہ  

بال جبریل

مندرجات

اُٹھ کہ خورشید کا سامانِ سفر...
پُھول کی پتّی سے کٹ سکتا ہے ہیرے...
میری نوائے شوق سے شور حریمِ ذات...
ترے شیشے میں مے باقی نہیں ہے
اگر کج رَو ہیں انجم، آسماں تیرا...
گیسوئے تاب دار کو اور بھی تاب...
دِلوں کو مرکزِ مہر و وفا کر
اثر کرے نہ کرے، سُن تو لے مِری...
جوانوں کو مری آہِ سَحر دے
کیا عشق ایک زندگیِ مستعار کا
پریشاں ہو کے میری خاک آخر دل نہ...
تری دنیا جہانِ مُرغ و ماہی
دگرگُوں ہے جہاں، تاروں کی گردش...
کرم تیرا کہ بے جوہر نہیں مَیں
لا پھر اک بار وہی بادہ و جام اے...
وہی اصلِ مکان و لامکاں ہے
مِٹا دیا مرے ساقی نے عالمِ من و تو
کبھی آوارہ و بے خانماں عشق
متاعِ بے بہا ہے درد و سوزِ آرزو...
کبھی تنہائیِ کوہ و دمن عشق
تجھے یاد کیا نہیں ہے مرے دل کا وہ...
عطا اسلاف کا جذبِ دُروں کر
ضمیرِ لالہ مئے لعل سے ہُوا لبریز
یہ نکتہ میں نے سیکھا بُوالحسن سے
وہی میری کم نصیبی، وہی تیری بے...
خرد واقف نہیں ہے نیک و بد سے
اپنی جولاں گاہ زیرِ آسماں سمجھا...
خدائی اہتمامِ خشک و تر ہے
اک دانشِ نُورانی، اک دانشِ...
یہی آدم ہے سُلطاں بحر و بَر کا
یا رب! یہ جہانِ گُزَراں خوب ہے...
سما سکتا نہیں پہنائے فطرت میں...
یہ کون غزل خواں ہے پُرسوز و نشاط...
وہ حرفِ راز کہ مجھ کو سِکھا گیا...
عالِم آب و خاک و باد! سِرِّ عیاں...
تُو ابھی رہ گزر میں ہے، قیدِ...
امینِ راز ہے مردانِ حُر کی درویشی
پھر چراغِ لالہ سے روشن ہوئے کوہ...
مسلماں کے لہُو میں ہے سلیقہ دل...
عشق سے پیدا نوائے زندگی میں زِیر...
دل سوز سے خالی ہے، نِگہ پاک نہیں...
ہزار خوف ہو لیکن زباں ہو دل کی...
پُوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی...
یہ حُوریانِ فرنگی، دل و نظر کا...
دلِ بیدار فاروقی، دلِ بیدار...
خودی کی شوخی و تُندی میں کبر و...
میرِ سپاہ ناسزا، لشکریاں شکستہ...
زمِستانی ہوا میں گرچہ تھی شمشیر...
یہ دَیرِ کُہن کیا ہے، انبارِ خس...
کمالِ تَرک نہیں آب و گِل سے...
عقل گو آستاں سے دُور نہیں
خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ...
یہ پیام دے گئی ہے مجھے بادِ صُبح...
تری نگاہ فرومایہ، ہاتھ ہے کوتاہ
خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہیں
نگاہِ فقر میں شانِ سکندری کیا ہے
نہ تُو زمیں کے لیے ہے نہ آسماں کے...
تُو اے اسیرِ مکاں! لامکاں سے دور...
خِرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکیمانہ
افلاک سے آتا ہے نالوں کا جواب آخر
ہر شے مسافر، ہر چیز راہی
ہر چیز ہے محوِ خود نمائی
اعجاز ہے کسی کا یا گردشِ زمانہ!
خِردمندوں سے کیا پُوچھوں کہ...
جب عشق سِکھاتا ہے آدابِ خود آگاہی
مجھے آہ و فغانِ نیم شب کا پھر...
نہ ہو طُغیانِ مشتاقی تو مَیں...
فطرت کو خِرد کے رُوبرو کر
یہ پِیرانِ کلیسا و حرم، اے وائے...
تازہ پھر دانشِ حاضر نے کیا سِحرِ...
ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں
ڈھُونڈ رہا ہے فرنگ عیشِ جہاں کا...
خودی ہو علم سے محکم تو غیرتِ...
مکتبوں میں کہیں رعنائیِ افکار...
حادثہ وہ جو ابھی پردۂ افلاک میں...
رہا نہ حلقۂ صُوفی میں سوزِ مشتاقی
ہُوا نہ زور سے اس کے کوئی گریباں...
یوں ہاتھ نہیں آتا وہ گوہرِ یک...
نہ تخت و تاج میں نَے لشکر و سپاہ...
فِطرت نے نہ بخشا مجھے اندیشۂ...
کریں گے اہلِ نظر تازہ بستیاں آباد
کی حق سے فرشتوں نے اقبالؔ کی...
نے مُہرہ باقی، نے مُہرہ بازی
گرمِ فغاں ہے جَرس، اُٹھ کہ گیا...
مِری نوا سے ہُوئے زندہ عارف و...
ہر اک مقام سے آگے گزر گیا مہِ نو
کھو نہ جا اس سحَر و شام میں اے...
تھا جہاں مدرسۂ شیری و شاہنشاہی
ہے یاد مجھے نکتۂ سلمانِ خوش آہنگ
فقر کے ہیں معجزات تاج و سریر و...
کمالِ جوشِ جُنوں میں رہا مَیں...
شعور و ہوش و خرد کا معاملہ ہے عجیب
رہ و رسمِ حرم نا محرمانہ
ظلامِ بحر میں کھو کر سنبھل جا
مکانی ہُوں کہ آزادِ مکاں ہُوں
خودی کی خلوتوں میں گُم رہا مَیں
پریشاں کاروبارِ آشنائی
یقیں، مثلِ خلیل آتش نشینی
عرب کے سوز میں سازِ عجم ہے
کوئی دیکھے تو میری نَے نوازی
ہر اک ذرّے میں ہے شاید مکیں دل
ترا اندیشہ افلاکی نہیں ہے
نہ مومن ہے نہ مومن کی امیری
خودی کی جلوَتوں میں مُصطفائی
نِگہ اُلجھی ہوئی ہے رنگ و بُو میں
جمالِ عشق و مستی نَے نوازی
وہ میرا رونقِ محفل کہاں ہے
سوارِ ناقہ و محمل نہیں مَیں
ترے سِینے میں دَم ہے، دل نہیں ہے
ترا جوہر ہے نُوری، پاک ہے تُو
محبّت کا جُنوں باقی نہیں ہے
خودی کے زور سے دُنیا پہ چھا جا
چمن میں رختِ گُل شبنم سے تر ہے
خرد سے راہرو روشن بصر ہے
دُعا
دمِ عارف نسیمِ صبح دم ہے
مَسجدِقُرطُبہ
قید خانے میں معتمدؔکی فریاد
عبد الرّحمٰن اوّل کا بویا ہُوا...
رگوں میں وہ لہُو باقی نہیں ہے
ہسپانیہ
کھُلے جاتے ہیں اسرارِ نہانی
طارق کی دُعا
زمانے کی یہ گردش جاودانہ
لینن
فرشتوں کا گیت
فرمانِ خدا
حکیمی، نامسلمانی خودی کی
ذوق و شوق
پَروانہ اور جُگنو
جاوید کے نام
گدائی
مُلّا اور بہشت
دین وسیاست
اَلْاَرْضُ للہ!
ایک نوجوان کے نام
نصیحت
لالۂ صحرا
اقبالؔ نے کل اہلِ خیاباں کو...
ساقی نامہ
زمانہ
فرشتے آدم کو جنّت سے رُخصت کرتے...
رُوحِ ارضی آدم کا استقبال کرتی ہے
فطرت مری مانندِ نسیمِ سحرَی ہے
پِیرومُرید
ترا تن رُوح سے ناآشنا ہے
جبریل واِبلیس
کل اپنے مُریدوں سے کہا پِیرِ...
اذان
اندازِ بیاں گرچہ بہت شوخ نہیں ہے
محبت
ستارے کاپیغام
جاوید کے نام
فلسفہ ومذہب
یورپ سے ایک خط
نپولین کے مزار پر
مسولینی
سوال
پنچاب کے دہقان سے
نادِر شاہ افغان
خوشحال خاںکی وصیّت
تاتاری کا خواب
حال ومقام
ابوالعلامعرّیؔ
سنیما
پنچاب کے پِیرزادوں سے
سیاست
فَقر
خودی
جُدائی
خانقاہ
اِبلیس کی عرضداشت
لہُو
پرواز
شیخِ مکتب سے
فلسفی
شاہِیں
باغی مُرید
ہارون کی آخری نصیحت
ماہرِ نفسیات سے
یورپ
آزادیِ افکار
شیر اور خچّر
چیونٹی اورعقاب

The Mentor and The Disciple

The Indian Disciple
Discerning eyes bleed in pain,
For faith is ruined by knowledge in this age.
Rumi
Fling it on the body, and knowledge becomes a serpent;
Fling it on the heart, and it becomes a friend.
The Indian Disciple:
Master of love; of God!
I do remember thy noble words:
‘Wherefrom comes this Friendly voice—
Thin, feeble, and dry as a reed?’
The world today has an eternal sadness,
With neither joy, nor love, nor certitude,
What doth it know about this mystery—
Who is the friend, and what is the friend’s voice?
The sound of music is a dirge
In the West’s crumbling pageant.
Rumi
Every ear is not attuned to the word of truth,
As a fig suits not the palate of every bird.
The Indian Disciple
I have mastered knowledge of both the East and the West,
My soul suffers still in agony.
Rumi
Quacks sicken you more;
Come to us for a cure.
The Indian Disciple
Thy glance of wisdom brightens my heart;
Explain to me the order for jihad.
Rumi
Break the image of God by the command of God,
Break the friend’s glass, with the friend’s stone.
The Indian Disciple
Oriental eyes are dazzled by the West;
Western nymphs are fairer than those in Paradise.
Rumi
Silver glisters white and new,
But blackens the hands and clothes.
The Indian Disciple
The warm‑blooded youths in schools,
Alas, are victims of Western magic!
Rumi
When an unfledged bird begins its flight,
It becomes a ready feline morsel.
The Indian Disciple
How long this clash between church and state?
Is the body superior to the soul?
Rumi
Coins may jingle at night,
But gold waits for the morrow.
The Indian Disciple
Tell me about the secret of man,
Tell how dust is a peer of the stars.
Rumi
His outside dies of an insect’s bite,
His inside roams the seven heavens.
The Indian Disciple
Dust with thy help has a luminous eye,
Is man’s purpose knowledge or vision?
Rumi
Man is perception; the rest is skin;
Perception is the perception of God.
The Indian Disciple
The East lives on through your words!
Of what disease nations die?
Rumi
Every nation that perished in the past,
Perished for mistaking stone for incense.
The Indian Disciple
Muslims have now lost their vigour and force;
Wherefore are they so timid and tame?
Rumi
No nation meets its doom,
Until it angers a man of God.
The Indian Disciple
Though life is a mart without any lustre,
What kind of bargain doth offer some gain?
Rumi
Sell cleverness and purchase wonder;
Cleverness is doubt; wonder is perception.
The Indian Disciple
My peers consort with kings in court,
While I am a beggar, uncovered, bare‑headed.
Rumi
To be the slave of a man with an illumined heart,
Is better than to rule the ruler’s of’ the land.
The Indian Disciple
I am at a loss to know the puzzle
Of free will and determination.
Rumi
Wings bring a hawk to Kings;
Wings bring a crow to the grave.
The Indian Disciple
What is the aim of the Prophet’s path—
The rule of the earth, or a monastery?
Rumi
Prudence in our faith decrees war and power,
In the faith of Jesus—a cave and mount.
The Indian Disciple
How to discipline the body?
And how to awaken the heart?
Rumi
Be obedient, ride on the earth like a horse,
Not like a corpse borne on shoulders.
The Indian Disciple
The secret of faith I do not know;
How to believe in the Day of Judgement?
Rumi
Be the Judgement Day, and see the Judgement Day;
This is the condition for seeing everything.
The Indian Disciple
The selfhood soars up to the skies—
It preys upon the sun and the moon—
Deprived of the Presence, relying on existence, wearied:
Impoverished by its own preys.
Rumi
Love alone is fit to be hunted,
But who can ever ensnare it!
The Indian Disciple
Thou knowest the heart of the universe;
Tell how a nation can be strong?
Rumi
If thou art a grain, it will be picked by birds,
And if a blossom, it will be picked by urchins.
Hide thy grain, and be the trap;
Hide thy blossom, and be the grass.
The Indian Disciple
Thou callest me to seek the heart;
To be a seeker of the heart, and to be in a conflict;
My heart is in my breast,
Like a mirror, it shows my powers.
Rumi
Thou sayest thou hast a heart
The heart is not below, but in the empyrean,
Thou thinkest thy heart is a heart,
Forsaking the search for illumined hearts.
The Indian Disciple
My mind soars in ethereal flights,
But I grovel in the dust;
I have failed in the affairs of the world;
Kicks and buffets are my lot;
Why is material world beyond my reach?
Why are the wise in faith, fools in the world?
Rumi
One who can scale the heights of heaven,
Can tread the path of earth with ease.
The Indian Disciple
What is the secret of knowledge and wisdom?
And how to be blessed with passion and pain?
Rumi
Knowledge and wisdom are born of honest living;
Love and ecstasy are born of honest living.
The Indian Disciple
The world demands me to meet and mingle,
But the song is born in solitude.
Rumi
Keep away from strangers, not from Him,
Wrap thyself for winter, not for spring.
The Indian Disciple
India now has no light of vision or yearning;
Men of illumined hearts have fallen on evil days.
Rumi
Imparting heat and light is the task of the brave;
Cunning and shamelessness are the refuge of the mean.

Translated by: V.G. Kiernan
پِیرومُرید

بھی موجود ہے


logo Iqbal Academy
اقبال اکادمی پاکستان
حکومتِ پاکستان
اقبال اکادمی پاکستان