Allama Iqbal's Poetry
  bullet سرورق   bullet شخصیت bulletتصانیفِ اقبال bulletگیلری bulletکتب خانہ bulletہمارے بارے میں bulletرابطہ  

ارمغان حجاز

مندرجات

اِبلیس کی مجلسِ شُوریٰ
بُڈھّے بلوچ کی نِصیحت بیٹے کو
تصویر و مُصوّر
عالمِ بَرزخ
معزول شہنشاہ
دوزخی کی مُناجات
مسعود مرحوم
آوازِ غیب
رُباعِیات
مری شاخِ اَمل کا ہے ثمر کیا
فراغت دے اُسے کارِ جہاں سے
دِگرگُوں عالمِ شام و سحَر کر
غریبی میں ہُوں محسودِ امیری
خرد کی تنگ دامانی سے فریاد
کہا اقبالؔ نے شیخِ حرم سے
کُہن ہنگامہ ہائے آرزو سرد
حدیثِ بندۂ مومن دل آویز
تمیزِ خار و گُل سے آشکارا
نہ کر ذکرِ فراق و آشنائی
ترے دریا میں طوفاں کیوں نہیں ہے
خِرد دیکھے اگر دل کی نگہ سے
کبھی دریا سے مثلِ موج ابھر کر
مُلّا زادہ ضیغم لولا بی کشمیری...
پانی ترے چشموں کا تڑپتا ہوا سیماب
موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے...
آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور و...
گرم ہو جاتا ہے جب محکوم قوموں کا...
دُرّاج کی پرواز میں ہے شوکتِ...
رِندوں کو بھی معلوم ہیں صُوفی کے...
نکل کر خانقاہوں سے ادا کر رسمِ...
سمجھا لہُو کی بوند اگر تُو اسے...
کھُلا جب چمن میں کتب خانۂ گُل
آزاد کی رگ سخت ہے مانندِ رگِ سنگ
تمام عارف و عامی خودی سے بیگانہ
دِگرگُوں جہاں اُن کے زورِ عمل سے
نشاں یہی ہے زمانے میں زندہ قوموں...
چہ کافرانہ قِمارِ حیات می بازی
ضمیرِ مغرب ہے تاجرانہ، ضمیرِ...
حاجت نہیں اے خطّۂ گُل شرح و بیاں...
خود آگاہی نے سِکھلا دی ہے جس کو...
آں عزمِ بلند آور آں سوزِ جگر آور
غریبِ شہر ہوں مَیں، سُن تو لے...
سر اکبر حیدری، صدرِ اعظم حیدر...
حُسین احمد
حضرتِ انسان

مسعود مرحوم

یہ مہر و مہ، یہ ستارے یہ آسمانِ کبود
کسے خبر کہ یہ عالم عدَم ہے یا کہ وجود
خیالِ جادہ و منزل فسانہ و افسوں
کہ زندگی ہے سراپا رحیلِ بے مقصود
رہی نہ آہ، زمانے کے ہاتھ سے باقی
وہ یادگارِ کمالاتِ احمد و محمود
زوالِ علم و ہُنر مرگِ ناگہاں اُس کی
وہ کارواں کا متاعِ گراں بہا مسعود!
مجھے رُلاتی ہے اہلِ جہاں کی بیدردی
فغانِ مُرغِ سحَر خواں کو جانتے ہیں سرود
نہ کہہ کہ صبر میں پِنہاں ہے چارۂ غمِ دوست
نہ کہہ کہ صبر معمّائے موت کی ہے کشود
“دلے کہ عاشق و صابر بود مگر سنگ است
ز عشق تا بہ صبوری ہزار فرسنگ است”
(سعدؔیؒ)
نہ مجھ سے پُوچھ کہ عمرِ گریز پا کیا ہے
کسے خبر کہ یہ نیرنگ و سیمیا کیا ہے
ہُوا جو خاک سے پیدا، وہ خاک میں مستور
مگر یہ غَیبتِ صغریٰ ہے یا فنا، کیا ہے!
غبار راہ کو بخشا گیا ہے ذوقِ جمال
خِرد بتا نہیں سکتی کہ مُدّعا کیا ہے
دِل و نظر بھی اسی آب و گِل کے ہیں اعجاز
نہیں تو حضرتِ انساں کی انتہا کیا ہے؟
جہاں کی رُوحِ رواں ’لا اِلٰہَ اِلّا ھُوْ،
مسیح و میخ و چلیپا، یہ ماجرا کیا ہے!
قصاص خُونِ تمنّا کا مانگیے کس سے
گُناہ گار ہے کون، اور خُوں بہا کیا ہے
غمیں مشو کہ بہ بندِ جہاں گرفتاریم
طلسم ہا شکنَد آں دلے کہ ما داریم
خودی ہے زندہ تو ہے موت اک مقامِ حیات
کہ عشق موت سے کرتا ہے امتحانِ ثبات
خودی ہے زندہ تو دریا ہے بے کرانہ ترا
ترے فراق میں مُضطر ہے موجِ نیل و فرات
خودی ہے مُردہ تو مانندِ کاہ پیشِ نسیم
خودی ہے زندہ تو سلطانِ جملہ موجودات
نگاہ ایک تجلّی سے ہے اگر محروم
دو صد ہزار تجلّی تلافیِ مافات
مقام بندۂ مومن کا ہے ورائے سپہر
زمیں سے تا بہ ثُریّا تمام لات و منات
حریمِ ذات ہے اس کا نشیمنِ ابدی
نہ تِیرہ خاکِ لحدَ ہے، نہ جلوہ گاہِ صفات
خود آگہاں کہ ازیں خاک داں بروں جَستند
طلسمِ مہر و سِپہر و ستارہ بشکستند
مسعود مرحوم

بھی موجود ہے


logo Iqbal Academy
اقبال اکادمی پاکستان
حکومتِ پاکستان
اقبال اکادمی پاکستان